باشین

( باشِین )
{ با + شِین }
( فارسی )

تفصیلات


اصلاً فارسی زبان کا لفظ ہے اردو میں فارسی سے ماخوذ ہے اور بطور اسم استعمال ہوتا ہے۔ ١٧٨٠ء کو "کلیات سودا" میں مستعمل ملتا ہے۔

اسم نکرہ ( مؤنث - واحد )
جنسِ مخالف   : باشَہ [با + شہ]
١ - باز سے چھوٹا اور شکرے سے بڑا ایک زرد چشم شکاری پرندہ (جو چھوٹی چھڑیوں کو شکار کرتا ہے۔)
"میر شکار جانور ان صید گیر باز، جڑ، باشین. کو درست کر در دولت شاہزادہ پر حاضر ہوئے۔"      ( ١٩٤٣ء، دلی کی چند عجیب ہستیاں، ٥٢ )