کالی بھیڑ

( کالی بھیڑ )
{ کا + لی + بھیڑ (یائے مجہول) }

تفصیلات


سنسکرت زبان سے ماخوذ اسم صفت 'کالٍ' بطور صفت کے بعد ہندی زبان سے ماخوذ اسم 'بھیڑ' بطور موصوف ملنے سے مرکب توصیفی بنا۔ اردو میں عربی رسم الخط کے ساتھ بطور صفت استعمال ہوتا ہے۔ سب سے پہلے ١٩٨٢ء کو "آتش چنار" میں مستعمل ملتا ہے۔

صفت ذاتی ( واحد )
١ - منافق، بد معاش، بدچلن، غنڈا، جو نامعلوم طریقے سے نقصان پہنچاتا ہے (انگریزی بلیک شیپ کا ترجمہ)۔
"وہ ان کالی بھیڑوں میں سے جو قوم کے جسم سے . خون پی پی کر موٹی ہو رہی ہیں کوئی واسطہ نہ رکھیں۔"      ( ١٩٨٢ء، آتش چنار، ٨٠٥ )
  • black sheep